FBR Wins First Ever Court Conviction under Anti Money Laundering Act

Anti Money Laundering Court Case by FBR

FBR has succeeded in winning the first ever case of conviction for the offence of money laundering based on massive tax evasion. The Directorate General I & I-IR had received financial intelligence in respect of Mr. Habibullah proprietor of M/s Rai Trading Company, Bajaur, KP wherein it was disclosed that the quantum of transactions (Cash & Bank) did not match with the suspect’s business profile. 

Initial investigations were conducted by the Directorate Intelligence & Investigation, Inland Revenue Service under tax laws which unearthed six other bank accounts with huge transactions. Total proceeds in all the bank accounts were found to be Rs. 2,090 Million whereas the suspect paid only tax of Rs. 192,877/ for the tax year-2015. The suspect was involved in huge concealment of income, undeclared bank accounts and mis-declaration/inaccurate particulars to hoodwink the tax authorities. A detailed scrutiny also revealed element of money laundering, therefore, investigations were initiated for the offence of money laundering under the Anti-Money Laundering Act-2010 (AMLA).

With the prior approval of the Concerned Court, bank accounts were provisionally attached under section 8 of the AMLA 2010. On completion of investigations under Section-9 of AMLA 2010, final challan under AMLA-2010 along with the complaint under Section- 203 of the Income Tax Ordinance (ITO), 2001 for the offence of money laundering and tax offence respectively were submitted in the Court. 

The prayers of the department before the court included punishment for both tax evasion and offence of money laundering and forfeiture of the proceeds.  The trial proceedings concluded on 30th November, 2021 resulting into conviction of the accused under Section 4 of AMLA 2010 thus leading to 02 years of rigorous imprisonment and a fine of Rs. 5 Lacs. In addition to this, the accused was also convicted under Section 192 -A of the ITO, 2001 with a simple imprisonment of 01 year and a fine of Rs. 01 lac. Furthermore, the court forfeited the proceeds of crime amounting to Rs 2090.4 Million.

Advisor to PM on Finance & Revenue Shaukat Tarin and Chairman FBR/Secretary Revenue Division, Dr. Muhammad Ashfaq Ahmed have commended the outstanding performance of Directorate of I & I-IR and congratulated them on this importance success.

This is by all means a great success of FBR in its ongoing drive against tax evasion and money laundering and will pave the way for more convictions of various cases under investigation with the department as well as awaiting the conclusion of trial proceedings in the relevant courts of law. Needless to add that FBR is following a policy of zero tolerance against tax evasion and has introduced a number of innovative interventions both at policy and operational level to ensure a culture of tax compliance in the country.

ایف بی آر نے ملکی تاریخ میں پہلی مرتبہ اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ کے تحت مقدمہ جیت لیا

فیڈرل بورڈ آف ریونیو نے ٹیکس چوری پر مبنی منی لانڈرنگ کے جرم پر پہلی مرتبہ سزا کو یقنی بنایا اور دائر شدہ کیس کو جیت لیا۔ڈائریکٹوریٹ جنرل آئی اینڈ آئی –آئی آر کو حبیب اللہ، مالک رائے ٹریڈنگ کمپنی باجوڑ ، خیبر پختونخواہ سے متعلق مالیاتی معلومات کا علم ہوا  جس سے پتہ چلا کہ ملزم کے کیش اور بینک ٹرانزیکشنز اس کی کاروباری پروفائل سے مطابقت نہیں رکھتے۔

ڈائریکٹوریٹ  انٹیلی جنس اینڈ انوسٹی گیشن نے ٹیکس قوانین کے تحت ابتدائی تحقیقات کیں جس کے دوران ملزم کے چھ مزید بینک اکاؤنٹس کا پتہ چلا جس کے ذریعے بڑی ٹرانزیکشنز کی گئیں تھی ۔ ملزم کے تمام بینک اکاؤنٹس کی کل رقم 2090 ملین روپے تھی جبکہ اس نے ٹیکس سال 2015 میں صرف  1لاکھ 92 ہزار 877 روپے ٹیکس ادا کیا۔ ملزم نے آمدن اور بینک اکاؤنٹس کو چھپایا اور ٹیکس اتھاریٹیز کو غلط معلومات فراہم کیں ۔ تفصیلی جانچ پڑتال کے بعد منی لانڈرنگ کا علم ہوا جس کے بعد اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ 2010 کے تحت کاروائی کا آغا ز کر دیا گیا۔ کورٹ کی اجازت کے بعد بینک اکاؤنٹس کو اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ 2010 کی شق 8 کے تحت ضبط کر لیا گیا ۔ ایکٹ کی شق 9 کے تحت تفتیش مکمل ہونے پر فائنل چلان پیش کیا گیا اور انکم ٹیکس آرڈینینس 2001 کی شق 203 کے تحت منی لانڈرنگ اور ٹیکس چوری کا مقدمہ درج کر دیا گیا۔ ڈائریکٹوریٹ جنرل نے کورٹ میں ٹیکس چوری ، منی لانڈرنگ  اوررقم ضبط کرنے کی استدعا

 

 کی۔ یہ ٹرائل 30 نومبر 2021 کو مکمل ہوا جس کے نتیجہ میں ملزم کو اینٹی منی لانڈرنگ ایکٹ کی شق 4 کے تحت  دو سال کی قید اور 5 لاکھ روپے جرمانہ عائد ہوا۔ اس کے علاوہ ملزم کو انکم ٹیکس آرڈینینس 2001 کی شق 192 اے کے تحت 1 سال کی قید اور 1 لاکھ روپے جرمانہ بھی عائد ہوا۔ عدالت نے جرم سے حاصل ہونے والی رقم 2090.4 ملین روپے بھی ضبط کرنے کے احکامات جاری کئے۔

وزیراعظم کے مشیر برائے خزانہ و ریونیو شوکت ترین اور چئیرمین /سیکریٹری ریونیو ڈویثرن ڈاکٹر محمد اشفاق احمد نے ڈائریکٹوریٹ جنرل آئی اینڈ آئی کی بہترین کارکردگی کی تعریف کی اور اس اہم کامیابی پر مبارک باد دی۔

یہ بلاشبہ ایف بی آر کی ٹیکس چوری اور منی لانڈرنگ کے خلاف ایک بہت بڑی کامیابی ہے ۔ امید ہے کہ اس کامیابی کے بعد دوسرے اس طرز کے کیسز جن پر تحقیقات جاری ہیں اور التواء کا شکار ہیں، بھی جلد حل ہوجائیں گے۔ ایف بی آر ٹیکس چوری کے خلاف زیرو ٹالرنس کی پالیسی پر گامزن ہے اور اس سلسلے میں پالیسی اور آپریشنل سطح پر ٹیکس کلچر کو پروان چڑھانے کے لئے کئی اقدامات متعارف کر چکا ہے

tax accounting services top tax consultants lahore pakistan
Ads:
Vinkmag ad

Admin

Read Previous

Weboc

Read Next

FTO Orders Pak Suzuki Motors to Refund Excess GST Collected From Buyers

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Share it !