Friday, 19 August 2022
Trending
UPDATES

FBR’s Track & Trace System on Sugar Sector Inaugurated

In a historic development and a special ceremony organized at Prime Minister’s Office here on Tuesday, the Prime Minister of Pakistan Mr. Imran Khan unveiled FBR’s Track & Trace System on Sugar Sector. Advisor to the PM on Finance & Revenue Mr. Shaukat Tarin, Cabinet Members, Parliamentarians, Federal Secretaries, office bearers of Sugar Mills Association, Chairman FBR Dr. Muhammad Ashfaq Ahmed and senior officers of FBR attended the graceful ceremony.

 

Addressing on the occasion, the Prime Minister called the roll out of the Track & Trace System (TTS) a watershed event in the development of Pakistan’s economy and hoped that it would lead to much-needed economic prosperity in times to come. “It is an integrated, technology based solution that shall ensure accurate reporting of production volumes through real time monitoring of manufacturing by affixation of tax stamps, improve quality control and thus ensure increased revenue collection,” he added. 

Prime Minister further said that at the time of assuming office, the government had inherited a dismal economic situation, and was confronted with multiple challenges. “Our revenue collection system was one of the weakest in the world, with a chronically low Tax-to-GDP ratio. We were unable to effectively mobilize our own resources for the well-being of the people,” he recalled. He emphasized that the present government was committed to bringing about change, and putting Pakistan on the path of self-sufficiency and in this regard the pivotal role of FBR could not be over-emphasized. “One of our immediate priorities was to identify how to improve monitoring mechanism and increase revenue collection,” he added. 

The Prime Minister continued by saying that the present government was the first one to break the nexus of tax evaders, vested interests and mafias. “We have not been afraid of taking difficult decisions nor shied away from plugging loopholes by enacting legislation that restricts corrupt practices and ensures transparency and fairness,” he continued. He added that the vested interests resisted our drive and efforts to improve regulatory oversight of the economy despite knowing that without sound economic practices and enhanced revenue collection, we would not be able to allocate funds for human development, infrastructural improvement, health, and education sector.

He said that one of the central tenets of present government’s economic policy had been to bring about increased digitization and automation of the entire tax apparatus as a means to reduce opportunities for graft, coercion and theft. “Track and Trace System will serve as a central pillar of that economic policy and shall revolutionize tax collection across Pakistan,” he added. 

The Prime Minister stated that the previous governments had made half-hearted attempts to introduce the TTS but despite five attempts over a period of a decade, they were unable to implement the system. “We too faced a monumental challenge in our attempt to bring about this paradigm shift and a barrage of lawsuits and threats. However, we persevered and were able to counter the legal challenges because of a robust policy and regulatory framework which provided the relevant guidelines for our decision making,” the Prime Minister remarked.

In the end, he generously appreciated Chairman and Team FBR for an outstanding performance in continuously achieving the assigned budgetary targets and sounded very optimistic that FBR will be able to collect Rs. 6 Trillion by the end of current financial year. He commended FBR for their untiring efforts to implement the TTS in the shortest possible time and acknowledged the role of licensee, AJCL/Authentix Consortium for spearheading its execution. 

The Advisor to the PM on Finance & Revenue Mr. Shaukat Tarin, while speaking on the occasion, thanked the Prime Minister for showing his keen interest and participating in the inaugural ceremony for launch of Track and Trace System on Sugar Sector. He also congratulated FBR for their persistent endeavors to launch this very important project. He also commended Sugar Mills Association for extending whole hearted cooperation for making this innovative intervention possible. “All 78 sugar mills have signed Tri-partite agreements amongst sugar mills, consortium (licensee) and FBR at Karachi, Lahore and Islamabad,” he added.

He further assured the Prime Minister that through introduction of technology in tax system, FBR will be able to broaden the tax base as efforts were already afoot to collaborate with NADRA and use artificial intelligence and mathematical modelling to ascertain the potential tax return filers. He informed the audience that FBR had collected reliable information about 15 million individuals who were taxable income but not filing tax returns. These potential filers will soon be mobilized to discharge their national obligation by becoming taxpayers. 

“The FBR enforcement officials will verify the validity of the stamps through different forensic instruments. Moreover, citizens of Pakistan will also be able to check and help with enforcement by reporting any fake stamps through mobile App,” he further added.

The Chairman FBR, Dr. Muhammad Ashfaq Ahmed, in his presentation explained the scope and significance of this high valued digital intervention. He stated that several attempts were made at introducing the Track and Trace System in Pakistan starting in 2008 and over a period of 13 years there were 5 unsuccessful attempts which failed due to lack of expertise, want of political will, corruption and other unethical practices. “The present government took a very bold step and provided FBR with strong support to implement Track and Trace System not just in Tobacco, as previously planned but added more sectors like Sugar, Cement and Fertilizers,” he added.

He also informed the audience that FBR intends to expand the scope of TTS to other key sectors which include Beverages, Petroleum, Pharmaceuticals and Steel and soon a proposal in this regard will be submitted to Prime Minister for his approval. He positively hoped that this key intervention in Sugar Sector shall yield more revenues, minimize human interaction between FBR and taxpayers and thus ensure ease of doing business.  He reaffirmed his resolve to maximize efforts to expand digitization to all key sectors in order to ensure transparency, plug leakages and thus maximize revenue potential. He concluded by thanking Sugar Mills Association for their cooperation in rolling out this important initiative and also appreciated the technical support provided by the licensed consortium in making this key digital intervention possible.

وزیر اعظم نے چینی سیکٹر کے لئے ایف بی آر کے ٹریک اینڈ ٹریس نظام کا افتتاح کر دیا

وزیر اعظم ہاؤس میں خصوصی طور پر منعقد کی جانے والی تقریب میں وزیر اعظم  عمران خان نے چینی سیکٹر کے لئے ایف بی آر کے ٹریک اینڈ ٹریس نظام کا افتتاح کر دیا۔اس موقع پر وزیر اعظم کے مشیر برائے خزانہ و ریونیو شوکت ترین، کابینہ ممبران، پارلیمنٹیرینز ، وفاقی سیکریٹریز ، شوگر ملز ایسوسی ایشن کے عہدیداران ، چئیرمین ایف بی آر ڈاکٹر محمد اشفاق احمد اور ایف بی آر کے سینئر افسران نے تقریب میں شرکت کی۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ ٹریک اینڈ ٹریس نظام کا افتتاح پاکستان کی معاشی ترقی کو حاصل کرنے کی طرف ایک تاریخی اہمیت کا حامل دن ہے جس کی وجہ سے مستقبل میں معاشی خوشحالی ممکن ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ ٹریک اینڈ ٹریس نظام ٹیکنالوجی پر مبنی پروگرام ہے جس کی وجہ سے پیداوار کا صحیح تخمینہ لگانا ممکن ہو گا ۔ ٹیکس سٹیمپس چسپاں کرنے کی وجہ سے پیداوار کے غلط اعدادو شمار کا سد باب ہو گااور کوالٹی کنٹرول میں بہتری کی وجہ سے محاصل کے حصول میں اضافہ ہو گا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ موجودہ حکومت کو چارج سنبھالنے کے بعد بد ترین معاشی بحران کا سامنا کرنا پڑا اور کئ چیلنجز سے نمٹنا پڑا۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا ٹیکس اکھٹا کرنے کا نظام باقی دنیا کے مقابلے میں بہت کمزور تھا اور ٹیکس ٹو جی ڈی پی شرح  کم ترین سطح پر تھا۔ عوام کی فلاح کے لئے ہم اپنے وسائل کو موثر طریقہ سے استعمال میں نہیں لا پا رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نے اس نظام میں تبدیلی لائی اور پاکستان کو ترقی کی راہ پر گامزن کیاجو کہ ایف بی آر کے صحیح سمت کے تعین کے بعد ہی ممکن ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ہماری ترجیح پیداوار کی نگرانی کو بہتر اور موثر کر کے محاصل کے حصول میں اضافہ پر مرکوز رہی۔

وزیر اعظم نے کہا  کہ موجودہ حکومت نے پہلی مرتبہ ٹیکس چوروں اور مافیا کے گٹھ جوڑ کو توڑا۔ حکومت نے مشکل فیصلے لئے اور موثر قانون سازی کے ذریعے کرپشن کو روکا اور شفافیت اور میرٹ کو یقنی بنایا۔ انہوں نے کہا کہ کچھ عناصر نے ہمارے اس اقدام کو روکنے کی بھر پور کوشش کی یہ سمجھتے ہوئے کہ مثبت معاشی اقدامات اور ریونیو میں اضافہ انسانی ترقی ، انفراسٹرکچر کی بہتری ، صحت اور تعلیم کے لئے کتنا ناگزیر ہے۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی معاشی پالیسی کی یہ ترجیح رہی ہے کہ ٹیکس نظام میں ڈیجیٹائیزیشن اور آٹومیشن میں اضافہ کیا جائے تاکہ رشوت، دباؤ اور ٹیکس چوری کا قلع قمع کیا جا سکے۔ ٹریک اینڈ ٹریس نظام اس معاشی پالیسی کا مرکزی ستون ہے جو کہ محاصل کے حصول میں انقلابی تبدیلی لے کر آئے گا۔

وزیر اعظم نے کہا کہ پچھلی حکومتوں نے ٹریک اینڈ ٹریس نظام کو متعارف کرنے میں ہچکچاہٹ کا مظاہر ہ کیا اور ایک دہائی سے زائد عرصہ میں پانچ مرتبہ کوشش کرنے کے باوجود اس نظام کو متعارف نہ کر سکے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کو بھی اس نظام کو متعارف کرنے میں شدید مخالفت کا سامنا کرنا پڑا۔ اس کے باوجود موجودہ حکومت نے اس چیلنج سے نمٹتے ہوئے تمام قانونی تقاضوں کو پورا کیا اور ایک پائیدار پالیسی اور ریگیولیٹری فریم ورک کے ذریعے اس نظام کو متعارف کیا۔

tax accounting services top tax consultants lahore pakistan
Ads:

آخر میں انہوں نے چئیرمین اور ٹیم ایف بی آر کی مسلسل ہدف سے زائد محصولات کے حصول  پر تعریف کی اور امید کا اظہار کیا کہ ایف بی آر رواں مالی سال 6 کھرب روپے کا    ہد ف حاصل کرلے گا۔ وزیر اعظم نے ایف بی آر کی محدود عرصہ میں   ٹریک اینڈ ٹریس نظام کو متعارف کرنے اور لائیسینس حاصل کرنے والی کمپنی اے جے سی ایل /آتھینٹکس کی طرف سے بر وقت  عمل درآمد پر بھی تعریف کی۔

وزیر اعظم کے مشیر برائے خزانہ و ریونیو شوکت ترین نے تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم کا چینی سیکٹر کے لئے ٹریک اینڈ ٹریس نظام کو افتتاح کرنے پر شکریہ ادا کیا۔ انہوں نے اس اہم پراجیکٹ کو شروع کرنے پر ایف بی آر کو مبارک باد دی۔ انہوں نے شوگر ملز اور ان کی ایسوسی ایشن کی طرف سے دیئے گئے تعاون کو سراہا جس کی وجہ سے اس پراجیکٹ کو محدود عرصہ میں شروع کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ تمام 78 شوگر ملز نے ایف بی آر اور لائیسنس ہولڈر کمپنی کے ساتھ کراچی، لاہور اور اسلام آباد میں معاہدے کئے ہیں۔ انہوں نے وزیر اعظم کو یقین دہانی کروائی کہ ٹیکس نظام میں ٹیکنالوجی کے استعمال سے ایف بی آر ٹیکس نیٹ میں اضافہ حاصل  کرے گا اور   اس سلسلے میں نادرہ کے ساتھ مل کر   آرٹیفیشل انٹیلی جنس   کے استعمال سے پوٹینشل ٹیکس ریٹرن فائلرز کی نشاندہی کرے گا۔انہوں نے سامعین کو بتایا کہ ایف بی آر نے ایک کروڑ پچاس لاکھ افراد کی  باوثوق معلومات حاصل کر لی ہیں  جن کی آمدن قابل ٹیکس ہے لیکن وہ ٹیکس گوشوارے جمع نہیں کروا رہے۔ ان ممکنہ فائلرز کو ترغیب دی جائے گی کہ وہ اپنی قومی ذمہ داری کو ادا کریں اور ٹیکس گزار بنیں۔

انہوں نے کہا کہ ایف بی آر کے افسران فارنزک طریقہ سے سٹیمپس کی مدت کو تصدیق کریں گے اور پاکستان کے شہری بھی انفورسمنٹ ادارہ کو موبائل ایپ کے ذریعے جعلی سٹیمپس کی نشاندہی میں مدد کر سکیں گے۔

چئیرمین ایف بی آر ڈاکٹر محمد اشفاق احمد نے اپنی پریزینٹیشن میں اس اہم ڈیجیٹل اقدام کے دائرہ کار اور اہمیت پر روشنی ڈالی۔انہوں کہا کہ ماضی میں سال 2008 سے اس نظام کو متعارف کرنے کی بارہا کوشش کی گئی اور 13 سالوں پر محیط عرصہ میں پانچ مرتبہ تجربے اور سیاسی بصیرت کی کمی اور کرپشن کی وجہ سے اس نظام کو متعارف نہ کیا جا سکا۔ مزید کہا کہ موجودہ حکومت نے اس سلسلے میں بہت بہادری کا مظاہرہ کیا ہے اور ایف بی آر کو ٹریک اینڈ ٹریس نظام کو نہ صرف تمباکو بلکہ چینی، سیمنٹ اور کھاد کے سیکٹرز میں بھی متعارف کرنے کے لئے مضبوط حمایت فراہم کی ہے۔ انہوں نے سامعین کو بتایا کہ ایف بی آر ٹریک اینڈ ٹریس نظام کےدائرہ کار کو دوسرے سیکٹرز جیسے مشروبات، پیٹرولیم، فارماسوٹیکلز اور سٹیل  تک بڑھانے کا ارادہ رکھتا ہے اور اس سلسلے میں جلد ہی تجاویز وزیر اعظم کی رضامندی کے لئے بجھوائی جائیں گی۔

انہوں نے اس امید کا اظہار کیا کہ چینی سیکٹر میں اس نظام کو متعارف کرنے سے ریونیو میں اضافہ ہو گا اور ایف بی آر اور ٹیکس گزاروں کے درمیان کم سے کم انسانی مداخلت کی وجہ سے تجارتی آسانی کو فروغ ملے گا۔ اختتام پر انہوں نے اس عزم کا اعادہ کیا کہ ایف بی آر تمام سیکٹرز میں ڈیجیٹائیزیشن  کو فروغ دینے، شفافیت کو یقنی بنانے، ریونیو چوری کو روکنے اور ریونیو میں اضافہ کے لئے بھر پور کوشش جاری رکھے گا۔ آخر میں انہوں نے شوگر ملز ایسوسی ایشن کا اس اہم اقدام  کو شروع کرنے پر تعاون کا شکریہ ادا کیا اور لائیسینس حاصل کرنے والی کمپنی کی طرف سے ملنے والی  تکنیکی معاونت  کی تعریف کی۔

Related posts
UPDATES

FBR Rebuts News Story Published by a Newspaper

Table of Contents FBR Rebuts News Story Published by a NewspaperOnly a Misleading to the…
Read more
UPDATES

Surcharge Imposed for Clearance of Banned Consignments

Surcharge Imposed for Clearance of Banned Consignments Government has allowed release of banned…
Read more
UPDATES

Extension in Date of Submission of Sales Tax Return

Extension in Date of Submission of Sales Tax Return Federal Board of Revenue (FBR) extended last…
Read more
Newsletter
Subscribe Now

Sign up for  Daily Digest and get the best of News for you.

    Leave a Reply

    Your email address will not be published.